میں جاب کرتا ہوں ۔۔۔میرے پاس پیسے ہیں کہاں انویسٹ کروں؟

میں جاب کرتا ہوں ۔۔۔میرے  پاس پیسے ہیں کہاں انویسٹ کروں؟
میں جاب کرتا ہوں ۔۔۔میرے  پاس پیسے ہیں کہاں انویسٹ کروں؟

میں جاب کرتا ہوں ۔۔۔میرے  پاس پیسے ہیں کہاں انویسٹ کروں؟
اکثر دوستوں کا  یہ سوال ہوتا ہے میں خود جاب کرتا ہوں میرے پاس پیسے ہیں ایک سے دو لاکھ  میں کونسا ایسا کام کروں تاکہ مجھے اس کا اچھا منافع بھی مل جائے اور میں اپنی جاب بھی جاری رکھ سکوں۔ایسے دوستوں کو میرا مشورہ ہے  آپ  خود کوئی کاروبار نہیں کر سکتے تو کسی ایسے بندے کو تلاش کریں جو کامیابی کے ساتھ کوئی کاروبار کر رہا ہو اس کے ساتھ انویسٹمنٹ کریں یہ انویسٹمنٹ لمبے عرصے کے لیے نہیں ہونی چاہیے بلکہ چند ماہ  تک کے لیے ہو نی چاہیے ۔ اب آپ لوگوں کے ذہن میں سوال آئے گا ایسے ہم کس پر یقین کر کے اپنے پیسے دے دیں۔



آپ اپنے قریبی رشتہ داروں میں سے کسی بندے کو دیکھ لیں یا پھر اپنے دوستوں میں سے کسی ایسے بندے کے ساتھ پیسے انویسٹ کریں جو کوئی کاروبار کامیابی سے کر رہا ہو ۔ گارنٹی کے طور پر ایک اشٹام پیپر پر معائدہ کر لیں۔کاروباری بندے کو سرمائے کی ضرورت ہوتی ہے اور آپ کو منافع سے غرض ہے۔ اس سارے معاملہ کو ایک مثال سے سمجھاتا ہوں۔

آپ کے پاس دو لاکھ روپے ہیں اور آپ کا کزن زاہد ایک ڈپیارٹ مینٹل سٹور یا جنرل سٹور چلاتا ہے آپ اس سے بات کریں  میرے پاس دو لاکھ روپیہ ہے اور میں اسے کسی کاروبار میں انویسٹ کرنا چاہتا ہوں اگر آپ کے کاروبار میں کوئی آپشن ہو تو مجھے بتائیں ۔ اب وہ آپ کو کہتا ہے یار ایک کمپنی ہے وہ چائے والی پتی بناتی ہے ان کی سکیم چل رہی ہے چھ کارٹن لینے پر ایک کارٹن فری دیتے ہیں اسی طرح ایک صابن اور صرف بنانے والی کمپنی ہے جس پر بہت جلد سکیم آنے والی ہے   میں اس کا زیادہ مال اٹھا کر سکیم سے فائدہ لے سکتا ہوں اور یہ مال دو ماہ کے اندر بیچ سکتا ہوں اس میں منافع عام روٹین سے زیادہ ہو گا آپ پوچھتے ہیں مجھے دو سے اڑھائی ماہ بعد کتنے  پیسے ملیں گے وہ حساب کر کے آپ کو بتاتا ہے ۔



مجھے اس سارے مال میں  تیس ہزار بچیں گے   اب آپ اس کے منافع کی شرح  کا فیصلہ کر لیں۔ اب یہ فیصلہ آپ دونو ں نے باہمی رضا مندی سے کرنا ہے جب  آپ کو اپنا منافع مل جائے تو اس سے پیسے لے لیں ۔ اگر آپ دوبا رہ کسی ڈیل  میں پیسے انویسٹ کرنا چاہیں تو دوبارہ معائدہ کر کے پیسے لگائیں۔

اس ساری انویسٹمنٹ سے  آپ اپنی جاب بھی جاری رکھ سکتے ہیں اور اپنے پیسوں سے جائز اور حلال منافع بھی کما سکتے ہیں۔ اکثر کاروباری معملات میں اختلاف اور لڑائیا ں اس لیے ہوتی ہیں کہ سارے معملات پہلے سے طع شدہ نہیں ہوتے جن کی وجہ سے بعد میں اختلاف پیدا ہو جاتے ہیں۔آج کل کے  مہنگائی کے دور میں اگر آپ سوچیں گے کہ میں خود سے اتنے پیسوں کی مدد سے کم وقت میں منافع کما لوں تو تھوڑا مشکل کام ہے لیکن نا ممکن نہیں ، اللہ ہم سب کے رزق میں برکتیں عطاء فرمائے، آمین۔

Post a Comment

0 Comments