صرف جان لینا ضروری نہیں عمل کرنا بھی سیکھیں Amal karna sekhain

صرف جان لینا ضروری  نہیں  عمل کرنا  بھی  سیکھیں    Amal karna sekhain

صرف جان لینا ضروری  نہیں  عمل کرنا  بھی  سیکھیں Amal karna sekhain

صرف جان لینا ضروری  نہیں  عمل کرنا  بھی  سیکھیں Amal karna sekhain

کسی   گاؤں  کے  قریب   جنگل میں  بنی  غار کے اندر   ایک  بابا  جی      رہتے تھے  ، وہیں  عبادت کرتے تھے ،   قریبی  گاؤں  کا  ایک  نوجوان  وہاں سے  گزر رہا تھا  ، اس کی  نظر   غار میں  موجود   بابا جی پر  پڑی  ، اس  کو  لگا یہ  کوئی  پہنچی ہوئی  ہستی  ہے ، نوجوان  نے  اپنے لیے  دعا  کا کہا  اور  اپنا ایک مسئلہ    حل  کرنے کیلئے   بابا  جی سے  دعا کروائی ،     نوجوان  چلا  گیا ، کچھ  دنوں کے  بعد  بابا  جی  کی  دعا  سُنی  گئی  اور نوجوان  کا   کام  ہو  گیا،

اس طرح  بابا جی   کی شہرت پھیلتی  چلی  گئی  لوگ دور دور سے   آ کر  بابا جی سے  دعا کروانے  لگے ، لیکن   بابا  جی اس   غار کو  چھوڑنے  کیلئے  تیار نہ تھے ،  ایک  دن   گاؤں کے لوگ   اکھٹے  ہو کر   بابا  جی   کے  پاس   آ گئے   اور غار سے  باہر   بابا  جی کا  انتظار کرنے لگے، لوگوں کی آواز سن کر بابا جی   غار سے  باہر  نکل  آئے ،  لوگوں  نے  بابا جی سے  عقیدت کے ساتھ  پوچھا ،  آپ یہاں  اتنے  عرصے سے  عبادت کر رہے ہیں،  آپ نے اس  سے  کیا  حاصل کیا ؟

بابا جی  نے     وہاں موجود  لوگوں سے  کہا  کہ میں  نے  اتنے  سالوں کی  عبادت  اور ریاضت کے  بعد   سیکھا کہ  جو  چیز میرے  فائدہ  مند ہے وہ   دوسروں کیلئے بھی اچھی ہے، اور  جو  چیز میرے لئے  نقصان   دہ ہے  وہ  دوسروں کیلئے   بھی  نقصان   دہ ہے ، اس لیے  دوسروں  کو  نقصان  نہ  پہنچاؤ،   دوسروں  کو وہی  دو  جو  آپ  خود کیلئے اچھا  سمجھتے  ہیں،

 وہاں موجود  تمام  لوگ  بابا جی  کی بات کو غور سے  سن رہے تھے کہ ایک  شخص   نے جوش میں  آ کر کہا  کہ  یہ  بات  تو کسی   پانچ سال کے بچے  کو  بھی معلوم  ہے،  آپ نے  اس  بات کو سمجھنے میں  اتنا عرصہ لگا دیا،  بابا جی نے کہا  کہ  یہ  بات   پانچ سال کا  بچہ   بھی  جانتا ہے اور ایک بوڑھا  بھی ،  لیکن   نہ تو  کوئی جوان  اور نہ ہی  کوئی بوڑھا   اس  بات  پر عمل  کرتا ہے،   تیسری  بات  جو میں  نے  سمجھی  وہ  یہ  ہے  کہ   صرف جان لینا  کافی  نہیں  ہوتا، ہمیں  اچھی باتوں  پر  عمل کرنا  بھی  سیکھنا   چاہیے،  اسی  طرح  ہم  سب لوگ  جانتے ہیں کہ  ہم  نے ان نہ ایک دن مر جانا ہے ، لیکن جیتے  جی ہم  اس  بات  کو ماننے سے انکار کرتے ہیں۔

جب تک  زندہ  ہیں  دوسروں  کے کام  آئیں  دوسروں کو فائدہ پہنچائیں، اگر  آپ کسی  کو فائدہ  نہیں دے سکتے تو  کم سے کم کسی کا  نقصان  بھی  مت کریں، جہاں  تک  ممکن ہو  لوگوں کی مدد کریں،  اور اچھائی  کو  فروغ دیں۔

  

Post a Comment

0 Comments