کسی کو کمزورمت سمجھناkisi ko kamzor mat samjhna

              کسی کو کمزورمت سمجھناkisi ko kamzor mat samjhna

کسی کو کمزورمت سمجھناkisi ko kamzor mat samjhna

              کسی کو کمزورمت سمجھناkisi ko kamzor mat samjhna

یہ بغداد  شہر کا  واقعہ  ہے ،  صبح کا  وقت تھا حلوائی  نے اپنی  دکان   کھولی  اور کام  میں مصروف  ہو  گیا  ،  ایک فقیر  چلتا ہوا حلوائی  کی دکان کے پاس سے  گزرا ، حلوائی  کو  ترس آگیا اس نے فقیر  کو  بلا کر  اپنے پاس بیٹھنے   کا کہا،   حلوائی  نے فقیر کو  گرما گرم  دودھ  پینے کو  دیا،  فقیر   نے   دودھ  کا پیالا  پیا  ،  اللہ  کا  شکر ادا کرتے  ہوئے  اور  حلوائی  کو  دعائیں  دیتے ہوئے  آگے  بڑھ گیا،

فقیر  تھوڑی  دور ہی  گیا تھا کہ  بازار میں ایک  جگہ  سیڑھیوں پر  ایک فاحشہ  عورت اپنے مرد دوست کے  ساتھ  بیٹھی  تھی،  دونوں  باتیں کرنے میں مصروف تھے، ہلکی  ہلکی  بارش ہو  رہی تھی جس  کی وجہ سے  بازار میں کیچڑ  تھا، جب  فقیر  ان  دونوں کے پاس سے  گزار تو  فاحشہ  عورت کے  کپڑوں پر  کیچڑ کا ایک  چھینٹا گر گیا،  فاحشہ  عورت کو  دیکھ کر  بہت  غصہ  آیا،  پاس بیٹھے  اس کے دوست نےغصے میں آ کر  فقیر کے  منہ  پر  تھپڑ مارا دیا اور فقیر کو   بُرا  بھلا کہا  شروع کر  دیا ، تم  دیکھ کر  نہیں  چل سکتے ، فقیر  نے غصہ کرنے کی بجائے  مسکرا کر آسمان کی طرف دیکھا  اور کہا یا اللہ  تو بھی بڑا  بے نیاز  ہے ،   کوئی  دود ھ  پلاتا ہے  اور کوئی  غصے میں  آ کر تھپڑ  مارتا ہے ،  اتنا کہہ کر  فقیر  آگے بڑھ  گیا ،

مزید پڑھیں: صرف جان لینا ضروری  نہیں  عمل کرنا  بھی  سیکھیں    

فاحشہ عورت  چھت  پر  جانے کیلئے  سیڑھیاں چڑھ  رہی  تھی  کہ اس کا پاس  پھسل  جاتا ہے  اور   و ہ  سر کے  بل   زمین پر  گرتی ہے ، سر میں  شدید  چوٹ  لگنے کی وجہ سے  وہ  عورت موقع پر ہی مر  جاتی ہے ، پورے  بازار میں  شور مچ جاتا ہے ، فقیر کی  بد دعا کی  وجہ سے  ایک  عورت کی موت ہو گئی ہے ،  فقیر  ابھی  بازار سے   نکلا نہیں  تھا  کہ لوگوں نے فقیر کو  پکڑ لیا،  اور کہنا  شروع کر دیا تم کیسے  فقیر  ہو  تمہاری  بد دعا کی وجہ سے  ایک  عورت  کی موت  ہو  گئی ہے ، تم   میں برداشت نہیں ہے ، 

فقیر نے لوگوں سے پوچھا  بات  کیا ہے ، میں نے کسی  کو بد دعا نہیں  دی ہے ، تم  لوگوں  کو غلط فہمی ہو رہی ہے ، لوگ  بضد  تھے  اور بار بار کہہ رہے تھے تمہاری  بد دعا کی وجہ سے عورت  کی  موت ہوئی   ہے ،  جب لوگ خاموش نہ ہوئے  تو  فقیر نے  کہا،  اگر سچ پوچھتے ہو تو میں نے   اس عورت کو کوئی  بد دعا نہیں  دی ، بلکہ  یہ  یاروں یاروں کی لڑائی ہے ، لوگوں نے حیران ہو کر پوچھا یہ تم کیا کہہ  رہے ہو؟  فقیر نےوہاں کھڑے  لوگوں سے کہا  جب میں اس  عورت کے پاس  سے  گزار  تو انجانے میں اس عورت کے کپڑوں پر  کیچڑ کا ایک  چھینتا پڑ گیا   جس کی وجہ سے  اس کا یار غصے میں آگیا اور مجھے  تھپڑ مارا،  جب  ان دونوں نے میرے  ساتھ اس طرح کا سلوک  کیا تو  میرے  یار کو  بھی غصہ آ گیا۔

ایک  بات  یاد رکھیں  کسی کو خو د کو کمتر  مت  سمجھیں ،  ہو سکتا ہے  وہ شخص  آپ سے  زیادہ  اللہ  کے  قریب ہو  ،ہمیشہ  دوسروں کے ساتھ  اچھے  طریقے سے پیش  آئیں۔

 

 

  

Post a Comment

0 Comments